"العلا سربراہی اجلاس" کے بعد خلیجی شہری کس کے منتظر ہیں؟

"العلا سربراہی اجلاس" کے بعد خلیجی شہری کس کے منتظر ہیں؟

جمعرات, 7 January, 2021 - 15:15
العلا میں خلیج سربراہی اجلاس کی کوریج کے لئے لگائے گئے میڈیا سینٹر میں کونسل کے لوگو کو دکھانے والے ایک اسکرین کے پاس سے ایک سعودی صحافی کو گزرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے (اے پی پی)
خلیج تعاون کونسل ممالک کے ماضی کے بحران کو ختم کرنے کے بعد سب سے نمایاں سوال یہ ہے کہ اس کے بعد کیا ہوگا؟ جاننے سے پہلے یہ کیسا ہوگا؟ اور کب ہوگا؟

سربراہی اجلاس کے دوران یہ اعلان کیا گیا ہے کہ قطر کے ساتھ خلیج اور مصر کے سفارتی تعلقات بحال ہوجائیں گے اور 40 ماہ سے زیادہ عرصے تک جاری رہنے والے اس بحران کے بعد جی سی سی ممالک کے لئے دوبارہ اتفاق رائے کا مرحلہ کھل چکا ہے اور اس سے چھ ممالک کے عوام کے مفادات کو حاصل کیا جا سکے گا۔


خلیج تعاون کونسل کی سیاسی امور اور گفت وشنید کے اسسٹنٹ سکریٹری جنرل ڈاکٹر عبد العزیز حمد العویششق کا کہنا ہے کہ العلا سربراہی کانفرنس میں ہونے والی پیش رفت کے نتیجے میں خلیجی ریاستوں اور عوام بہت ساری مثبت باتوں کی منتظر ہیں اور ان میں سب سے پہلے ان مسائل کو حل کرنا ہے جن کی وجہ سے ایک طرف تین خلیجی ریاستوں اور مصر اور دوسری طرف قطر کے مابین تنازعہ ہوا تھا اور اب اس کو حل کرنے کے لئے ایک طریقۂ کار اختیار کیا جائے گا کیونکہ ان اختلافات کو ختم کردیا گیا ہے اور اب ایک نئے مرحلہ کا آغاز ہوا ہے اور انہوں نے اس بات کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اب اس مسئلے کو حل کرنے کے لئے اس میکانزم کے آغاز میں ہیں۔(۔۔۔)


جمعرات  24 جمادی الاولی 1442 ہجرى – 07 جنوری 2021ء شماره نمبر [15381]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا