میانمار میں فوجی بغاوت کی بین الاقوامی مذمت

میانمار میں فوجی بغاوت کی بین الاقوامی مذمت

منگل, 2 February, 2021 - 11:45
فوجی بغاوت کے رہنماؤں کو گزشتہ روز صدارتی محل میں ایک اجلاس کے دوران دیکھا جا سکتا ہے (اے پی)
میانمار کی فوج نے کل ملک کے صدر آنگ سان سوچی کی سربراہی میں سویلین حکومت کا تختہ الٹ دیا ہے اور سوچی کو گرفتار بھی کر لیا ہے اور ارکان پارلیمنٹ کو نظربند رکھا ہے اور ساتھ ہی ایک سال کے لئے ہنگامی حالت کا اعلان کرکے جرنیلوں کو اہم عہدوں پر مقرر کر دیا ہے۔

یہ فوجی بغاوت ایک فوجی حکومت کے صرف دس ماہ کے بعد عمل میں آئی ہے جو تقریبا نصف صدی تک جاری رہی ہے اور اس بغاوت کو جائز قرار دینے کی کوشش میں فوج نے نومبر میں ہونے والے قانون ساز انتخابات کے دوران رونما ہونے والی بڑے پیمانے پر خلاف ورزیوں کی مذمت کی ہے جبکہ انتخابی کمیشن نے اس کا انکار کیا ہے اور 1991 میں امن نوبل انعام یافتہ سوچی کی جماعت نیشنل لیگ برائے جمہوریہ نے انتخابات میں 20 بھاری اکثریت سے کامیابیاں حاصل کی تھی۔


اس فوجی بغاوت کو بڑے پیمانے پر بین الاقوامی مذمت کا سامنا کرنا پڑا ہے جبکہ مغربی موقف بالخصوص امریکی اور چینی پوزیشن کے مابین واضح تضاد دیکھا گیا ہے اور یوروپی یونین نے بھی بغاوت کی مذمت کرتے ہوئے نظربندوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے اور واشنگٹن نے ذمہ داروں کے خلاف اقدامات کرنے کی دھمکی دی ہے اور بیجنگ نے آئین کے دائرہ کار کے اندر بات چیت اور اختلافات کے حل کا مطالبہ کیا ہے۔(۔۔۔)


منگل 20 جمادی الآخر 1442 ہجرى – 02 فروری 2021ء شماره نمبر [15407]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا