کرد نے سلیمانی کے قتل میں کسی بھی کردار سے انکار کیا ہے

کرد نے سلیمانی کے قتل میں کسی بھی کردار سے انکار کیا ہے

پیر, 10 May, 2021 - 17:45
امریکی ڈرون جہاز کے ذریعہ مارے گئے میزائل سے ٹکرانے کے بعد جلی ہوئی اس کار کو دیکھا جا سکتا ہے جس کے نتیجے میں جنوری 2020 کے اوائل میں بغداد ایئرپورٹ پر قدس فورس کمانڈر قاسم سلیمانی اور پاپولر موبلائزیشن کے رہنماء ہلاک ہوئے ہیں (ای پی اے)
گزشتہ روز کردستان کے خطے میں انسداد دہشت گردی کی دو ایجنسیوں نے ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کے قتل میں اپنے کسی بھی کردار کے ہونے کی تردید کیا ہے اور "کردستان سیکیورٹی کونسل" کے "سی ٹی ڈی" ڈیوائس نے کہا ہے کہ سائٹ "یاہو" کے ذریعہ شائع ہونے والی تفتیشی تحقیقات میں مذکور "سی ٹی جی" ڈیوائس کا تعلق پارٹی کے مرحوم رہنما اور سابق عراقی صدر جلال طالبانی کے بھتیجے لاہور شیخ جنکی سے ہے اور یہ ڈیوائس علاقے میں قانونی سیاق وسباق سے باہر کام کرتا ہے۔

اس سے متعلق سی ٹی جی کے ایک ترجمان نے ایک بیان میں یاہو کی رپورٹ سے انکار کیا ہے اور اس بات پر زور دیا ہے کہ سلیمانی مرحوم کامریڈ مام جلال کے قریبی دوست تھے اور ایک دن وہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کی خندق میں جنرل سلیمانی کے ساتھ لڑائی بھی کی ہے۔(۔۔۔)


پیر 28 رمضان المبارک 1442 ہجرى – 10 مئی 2021ء شماره نمبر [15504]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا