"کورونا" کی اصل کے بارے میں واشنگٹن اور بیجنگ نے ایک دوسرے پر لگائے الزامات

"کورونا" کی اصل کے بارے میں واشنگٹن اور بیجنگ نے ایک دوسرے پر لگائے الزامات

اتوار, 29 August, 2021 - 15:15
انٹیلی جنس رپورٹ میں تنازعہ حل نہیں ہو سکا اور بیجنگ نے سیاسی جوڑ توڑ کو کیا مسترد
واشنگٹن اور بیجنگ نے "کورونا" وائرس کی اصلیت کے بارے میں ایک دوسرے پر الزامات لگایا ہے اور ساتھ ہی ایک امریکی انٹیلی جنس رپورٹ شائع ہوئی ہے جو تنازعہ کو حل کرنے میں ناکام رہی ہے۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ چین بین الاقوامی تفتیش کاروں کی کوششوں میں رکاوٹ ڈال رہا ہے اور "کورونا" وائرس کی اصلیت سے متعلق اہم معلومات چھپا رہا ہے جس کی وجہ سے اب تک دنیا بھر میں 4.5 ملین سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں اور بائیڈن نے وضاحت کی ہے کہ چین میں اس وبا کی اصل کے بارے میں اہم معلومات موجود ہیں لیکن شروع سے ہی چین میں سرکاری عہدیداروں نے بین الاقوامی تفتیش کاروں اور عالمی صحت عامہ برادری کے ممبروں کو ان تک رسائی سے روک رکھا ہے۔


دوسری جانب واشنگٹن میں چینی سفارت خانے نے امریکی انٹیلی جنس سروسز پر سیاسی ہیرا پھیری کا الزام لگایا ہے اور سفارت خانے نے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکی انٹیلی جنس سروسز کی رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ امریکہ سیاسی جوڑ توڑ کے غلط راستے پر چلنا چاہتا ہے اور یہ بھی کہا کہ انٹیلی جنس سروسز کی رپورٹ اس بنیاد پر مبنی ہے کہ چین مجرم ہے اور یہ صرف چین کو قربانی کا بکرا بنانے کے لیے ہے۔(۔۔۔)


اتوار 20 محرم الحرام 1443 ہجرى – 29 اگست 2021ء شماره نمبر [15615]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا