یوکرائن کی جنگ عالمی بھوک کی لہر کو متحرک کرنے کا خطرہ ہے

یوکرائن کی جنگ عالمی بھوک کی لہر کو متحرک کرنے کا خطرہ ہے

جمعرات, 12 May, 2022 - 10:00
برطانوی وزیر اعظم اور ان کے سویڈش ہم منصب کل سویڈن کے نیٹو (سویڈن کی حکومت کی صدارت) کے ساتھ الحاق کے فیصلے سے قبل سٹاک ہولوم میں اپنی بات چیت اور مشترکہ دفاعی معاہدے کے اختتام پر کشتی کے سفر پر دیکھے جا سکتے ہیں اور دائرہ میں عمان کے سلطان ۔ ہیثم بن طارق کو کل مسقط میں روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کا استقبال کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے (رائٹرز)
اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انٹونیو گوٹیرس نے کل کہا ہے کہ وہ بھوک کی لہر کے پھیلاؤ پر گہری تشویش کا شکار ہیں اور یہ ایسے وقت میں ہے جب یوکرین میں جنگ سے دنیا کے مختلف حصوں میں غذائی تحفظ کو خطرہ لاحق ہے۔

یوکرین میں جنگ نے اناج، کھانا پکانے کے تیل، ایندھن اور کھاد کی عالمی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے جبکہ اقوام متحدہ کی ایجنسیوں نے خبردار کیا ہے کہ زیادہ قیمتیں افریقہ کے غذائی بحران کو مزید بڑھا دے گی اور فروری میں شروع ہونے والی جنگ نے بحیرہ اسود میں جہاز رانی میں خلل ڈالا ہے جو اناج اور دیگر سامان کے لیے ایک بڑا راستہ ہے اور اسی کی وجہ سے یوکرین اور روس کی برآمدات بند ہو گئی ہیں۔


گوٹیرس نے کہا ہے کہ مجھے کہنا ہے کہ میں بہت فکر مند ہوں اور خاص طور پر جب دنیا کے مختلف حصوں میں بھوک کے خطرے بڑھ رہے ہیں اور یہ سب یوکرین میں جنگ کے نتیجے میں خوراک کی حفاظت کے حوالے سے ہمیں جس المناک صورتحال کا سامنا ہے اس کی وجہ سے ہوا ہے۔(۔۔۔)


جمعرات  10 شوال المعظم  1443 ہجری  - 12   اپریل   2022ء شمارہ نمبر[15871]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا