بندرگاہ دھماکے کی برسی کے موقع پر تحقیقات میں رکاوٹ پر لبنانی غصہ

بندرگاہ دھماکے کی برسی کے موقع پر تحقیقات میں رکاوٹ پر لبنانی غصہ

جمعہ, 5 August, 2022 - 09:30
لبنانیوں نے کل بیروت میں بندرگاہ پر ہونے والے دھماکے کی برسی کے موقع پر اپنے ملک کا پرچم خون کے سرخ رنگ کے ساتھ بلند کیا (ا.ب)

کل لبنانیوں نے بیروت کی بندرگاہ میں ہونے والے دھماکے کی دوسری برسی کی یاد منائی، متاثرین، جن کی تعداد دو سو سے زیادہ تھی، اور ہزاروں زخمیوں اور تباہ ہونے والے مکانات پر شدید غم کا اظہار کیا۔ اس موقع پر خطاب کرنے والے سیاسی رہنماؤں اور مذہبی علماء نے سیاسی دباؤ کے تحت تحقیقات میں رکاوٹ ڈالنے پر تنقید کا اظہار کیا جس نے عدالتی تفتیش کار طارق الببطار کے ہاتھ باندھ دیئے۔...
گزشتہ روز بندرگاہ میں ٹوٹے ہوئے گندم کے شیڈز کا ایک اضافی حصہ گر گیا، جو کہ برسی کی یاد منانے کے لیے اس کے گردونواح میں مظاہرین کے جلوس کی آمد کے وقت میں ہے۔ ان کے چہرے چار اگست 2020 کی سہ پہر کے خون کی طرح سرخ رنگ سے رنگے ہوئے تھے۔
انہوں نے بیروت پیلس آف جسٹس کے سامنے بینرز اٹھائے ہوئے تھے جو انصاف کا مطالبہ کرنے والے مارچ کے چلنے کے منتظر تھے۔ مظاہرین میں سے ایک نے چیخ کر کہا، "تم ہمیں دو بار نہیں مار سکتے،" جب کہ لاؤڈ اسپیکر پر ماجدہ الرومی کا گانا چل رہا تھا، "اٹھو اور ظلم کو مقابلہ کرو (قوم اتحدی الظلم)۔" مظاہرے کا آغاز کل سہ پہر تین بجے تباہ شدہ ڈمپ کے سامنے پردیسی کے مجسمے کی طرف سے ہوا تو کچھ نے بین الاقوامی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے بینر اٹھائے ہوئے تھے اور کچھ  عدلیہ پر سیاسی اتھارٹی کے مکمل کنٹرول کی مذمت کر ریے تھے۔ غصے کے ساتھ اجتماعی مذمت کا اظہار اس نعرے سے کیا گیا:  "بیروت کے قتل کے مرتکب افراد کو دوبارہ منتخب کیا گیا ہے۔ ہم نہیں بھولیں گے۔ عوامی دباؤ تمہاری چالوں کو بے نقاب کرے گا۔"(...)


جمعہ - 8 محرم 1444ہجری - 05 اگست 2022ء شمارہ نمبر [15956]

 


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا