جنوبی لبنان میں "فتحاوی" رہنما کے قتل سے سکیورٹی خدشات رونما ہو گئے ہیں

جنوبی لبنان میں "فتحاوی" رہنما کے قتل سے سکیورٹی خدشات رونما ہو گئے ہیں

بدھ, 10 August, 2022 - 09:30
سعید علاء الدین کی 6 جون کی ایک تصویر دیکھی جا سکتی ہے جس میں وہ "حزب اللہ" کی ایگزیکٹو کونسل کے سربراہ ہاشم صفی الدین سے مصافحہ کرتے ہوئے نظر آئے ہیں لیکن انہیں کل عین الحلوہ کیمپ میں قتل کر دیا گیا ہے (اے ایف پی)
جنوبی لبنان کے عین الحلوہ کیمپ میں تحریک فتح کے ایک سیکورٹی اہلکار بریگیڈیئر جنرل سعید علاء الدین العسوس کے قتل نے قتل کی لہر کی واپسی کا خدشہ پیدا کر دیا ہے اور فلسطینی کیمپوں سے لبنان کی سلامتی کی صورتحال کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرنے کی کوشش شروع ہو گئی ہے۔

"عین الحلوہ" میں فلسطینی ذرائع نے بتایا ہے کہ نامعلوم مسلح افراد نے علاء الدین العسوس پر اس وقت فائرنگ کی جب وہ کیمپ میں سبزی منڈی کے اندر اپنے ایک دوست کے گھر موجود تھے اور سر میں گولی لگنے کی وجہ سے وہ براہ راست زخمی ہوئے اور ہاسپٹل منتقل کرنے کے فورا بعد ہی ان کی موت ہوگئی اور کیمپ میں کل الرٹ کی حالت دیکھی گئی ہے اور الفتح کے رہنما منیر المقدح نے الشرق الاوسط کو بتایا ہے کہ انہوں نے فضا کو ٹھنڈا کرنے کی کوشش میں الفتح کے کئی سینئر افسران کے ساتھ کیمپ کے محلوں کا دورہ کیا اور انہوں نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ فلسطینی دھڑے کیمپوں میں قتل کے واقعات کی واپسی کو روکنے کے لئے متحد ہیں۔


انہوں نے اعلان کیا کہ لبنانی فوج کی انٹیلی جنس کے ساتھ مکمل ہم آہنگی ہے تاکہ مجرموں کا سراغ لگانے اور انہیں جلد از جلد ٹرائل کے لئے درکار معلومات فراہم کی جا سکے اور اسی طرح انہوں نے اسرائیل پر کیمپوں کی سیکیورٹی کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرنے کی کوشش کرنے کا الزام بھی لگایا ہے اور دوسری جانب اور لبنان کی جانب سے سمندری سرحد کی حد بندی پر اسرائیلی ردعمل کی توقع کے تناظر میں "حزب اللہ" کے سیکرٹری جنرل حسن نصر اللہ نے آگاہ کیا ہے کہ اگر اسرائیل نے لبنان کو گیس نکالنے سے روکنے کی کوشش کیا تو اس کے ساتھ جنگ کیا جا سکتا ہے اور ساتھ ہی لبنان تک پہنچنے والے ہاتھ کو کاٹ دینے کی دھمکی دی ہے اور پارٹی کے سامعین سے کہا ہے کہ تمام امکانات کے لئے تیار اور مستعد رہیں۔(۔۔۔)


بدھ 12 محرم الحرام 1444ہجری -  10 اگست   2022ء شمارہ نمبر[15961]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا