خیالی ادب سعودی ڈراموں کے موضوعات میں شامل ہے

خیالی ادب سعودی ڈراموں کے موضوعات میں شامل ہے

جمعرات, 11 August, 2022 - 13:45
آیدا القصی اور وسمیہ رضا سیریز "ساحرات کی قیامت" کی ہیروئن
سعودی ڈرامے کے موضوعات کا رخ خیالی ادب کی طرف جا رہا ہے جیسے ناول نگار اسامہ المسلم نے اپنایا ہے جیسا کہ ان کا ناول "بساطین عربستان" ہے جسے "ساحرات کی قیامت" کے نام سے 10 حصوں کی سیریز میں تبدیل کیا گیا ہے۔

المسلم نے الشرق الاوسط کو بتایا ہے کہ ہماری ثقافت میں ایک خاص جادو ہے جسے ہم نے اب تک نہیں دکھایا ہے اور ہم نے ڈرامے کو گھروں کے اندر اور سماجی ماحول کی دیواروں کے درمیان محدود کر رکھا ہے اور سنباد، علاء الدین اور دیگر عرب افسانوں کی طرح آگے بڑھ کر نہیں پیش کیا ہے اور مزید یہ بھی کہا کہ ہم دوسروں کے مقابلے میں اسے بیان کرنے کے زیادہ مستحق ہیں۔


ان کا ناول جو "ساحرات کی قیامت" کے نام سے ایک سیریز میں تبدیل ہوا ہے اس میں تقریباً 150 اہم اداکاروں کی شرکت کی ضرورت ہے اور انہوں نے دعویٰ کیا ہے کہ تحریر اور اداکاری کے لحاظ سے یہ کام مکمل طور پر سعودی ہے اور یہ ایک بڑی تربیتی ورکشاپ کی طرح ہے۔


المسلم اسکرپٹ رائٹنگ اور ڈائیلاگ میں مہارت رکھتے ہیں اور انہوں نے اس تجربے میں داخل ہونے کو ہمیشہ ملتوی کیا ہے یہاں تک کہ انہیں ایک ایسی کمپنی کی تلاش تھی جو یہ سمجھتی ہو کہ فنتاسی کیا ہے اور اس کے پاس اس کام کو ہدایت دینے کی پیداواری صلاحیت ہو جس کا آغاز انہوں نے 2019 سے کیا ہے اور انہوں نے یہ بھی کہا کہ اسکرپٹ میں اکیلے ایک سال لگا، اور میں اسے مکمل کرنے کے لئے اس وقت ایک مشہور برطانوی مصنف کے ساتھ بیٹھا تھا۔(۔۔۔)


جمعرات 13 محرم الحرام 1444ہجری -  11 اگست   2022ء شمارہ نمبر[15962]  


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا