ایران سے جبر بند کرنے کا بین الاقوامی مطالبہ

ایران سے جبر بند کرنے کا بین الاقوامی مطالبہ

بدھ, 28 September, 2022 - 16:00
تہران میں ایرانی خواتین کے مظاہرہ کو دیکھا جا سکتا ہے (اے ایف پی)
پولیس ہیڈ کوارٹر میں ایک نوجوان خاتون کے قتل کے پس منظر میں بین الاقوامی سطح پر ایرانی حکام سے مطالبہ ہے کہ وہ حکومت کے خلاف پرامن مظاہروں کے بارے میں جبر کو روکے اور پرسوں (منگل) کی صبح تک مظاہرین تہران اور بڑے شہروں کی سڑکوں پر موجود رہے ہیں جنہوں نے سپریم لیڈر علی خامنئی، انسداد فسادات پولیس اور بسیج پر مشتمل فورسز کی مخالفت میں مذمتی نعرے لگائے اور سوشل نیٹ ورکس میں گردش کرنے والی ریکارڈنگز میں اس کا اظہار ہوا ہے۔

جنوبی شہر کرمان سے ایک ویڈیو کلپ میں لڑکیوں کو سر پر اسکارف جلاتے ہوئے دکھایا گیا ہے جبکہ ان میں سے ایک نے بغیر آستین والی قمیض پہن رکھی ہے اور "رائٹرز" نے ایران کے سرکاری ٹیلی ویژن کے حوالے سے بتایا ہے کہ پولیس نے کچھ شہروں میں فساد پسندوں کے ساتھ جھڑپیں کیں اور انہیں منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس کا استعمال کیا۔


اوسلو میں قائم ایران کے لئے انسانی حقوق کی تنظیم نے کہا کہ کریک ڈاؤن میں 76 افراد ہلاک ہوئے ہیں جن میں سے 20 مازندران صوبے میں ہیں۔(۔۔۔)


بدھ 03 ربیع الاول 1444ہجری -  28 ستمبر   2022ء شمارہ نمبر[16010]    


Related News



انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا