مشرقی شام میں "پاسداران انقلاب کے دارالحکومت" میں مسلح مظاہر کی واپسی

مشرقی شام میں "پاسداران انقلاب کے دارالحکومت" میں مسلح مظاہر کی واپسی

جمعرات, 29 September, 2022 - 08:30
امریکی افواج 7 ستمبر کو شمال مشرقی شام میں "شامی ڈیموکریٹک فورسز" کے ساتھ مشقوں کے دوران (ای.پی.اے)
گزشتہ روز کی اطلاعات کے مطابق مشرقی شام کے شہر المیادین، جسے مشرقی شام میں "پاسداران انقلاب کا دارالحکومت" کہا جاتا ہے، میں ایران نواز ملیشیا کی "شدید نقل و حرکت" دیکھنے میں آئی، جو کہ دیر الزور میں اتحادی اڈوں کی جانب اپنے ٹھکانوں اور میزائل پلیٹ فارمز پر "بین الاقوامی اتحاد" کی طرف سے نئے حملوں کے خوف سے اپنی نقل و حرکت اور آلات کار کو 10 روز تک منجمد کرنے اور چھپانے کے بعد ہے۔
"شام میں انسانی حقوق کی رصد گاہ" نے کل ایک رپورٹ میں کہا کہ ایرانی ملیشیا نے توپوں اور بھاری مشینری کو المیادین کے سگنل ایریا سے دیر الزور اور رقہ کی جانب منتقل کر دیا ہے۔ تاہم، انہوں نے ایران کے ملیشیا علاقوں میں عسکری مظاہر کی واپسی کی طرف اشارہ کیا ہے جیسے وہ اگست کے آخر میں "بین الاقوامی اتحاد" کے حملوں سے پہلے تھے۔ "رصد گاہ" نے نشاندہی کی کہ اس کے کارکنوں نے 19 ستمبر کو مشرقی شام میں ایرانی ملیشیا کے "دارالحکومت" کے طور پر بیان کیے جانے والے المیادین شہر میں "بین الاقوامی اتحاد" کے نشانہ بننے کے خوف سے فوجی مظاہر کو ہٹانے کی نگرانی کی تھی۔
امریکی قیادت میں بین الاقوامی اتحاد نے اس سے قبل دیر الزور میں "ایرانی ملیشیا" کے ٹھکانوں پر شدید حملے کیے تھے۔ جو کہ اس کی جانب سے شام-اردن-عراقی سرحدی مثلث میں (شامی اپوزیشن اور اتحادی افواج کے زیر کنٹرول) التنف بیس اور اس کے علاوہ دیر الزور کے دیہی علاقوں میں "شامی ڈیموکریٹک فورسز" کے زیر کنٹرول العمر فیلڈ میں امریکی فوجی اڈے پر حملوں کے الزام لگائے جانے کے بعد تھے۔(...)

جمعرات - 4 ربیع الاول 1444 ہجری - 29 ستمبر 2022ء شمارہ نمبر [16011]


Related News



انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا