عون کے بعد لبنان کو آئینی تشویش کا سامنا ہے

عون کے بعد لبنان کو آئینی تشویش کا سامنا ہے

ہفتہ, 29 October, 2022 - 14:15
عون کو کل ریپبلکن پیلس کے عملے کے ساتھ الوداعی تقریب کے دوران دیکھا جا سکتا ہے (دالاتی اور نہرا)
لبنانی صدر مائکل عون کی آئندہ پیر کو میعاد ختم ہونے کے بعد کے مرحلے کے بارے میں آئینی تشویش کا سامنا ہے؛ کیونکہ صدر جمہوریہ کے سلسلہ میں اتفاق نہ ہونے کے پس منظر میں یہ منصب اب خالی ہو چکا ہے جبکہ تنازعہ بھی بڑھ گیا ہے کہ آیا موجودہ نگران حکومت اس خلا کو سنبھالنے اور ایگزیکٹو برانچ کے فرائض سنبھالنے کے قابل ہے یا نہیں۔

کل صدر عون نے اشارہ کیا ہے کہ وہ حکومت کے استعفیٰ قبول کرنے کے فرمان پر دستخط کریں گے جب تک کہ کوئی اور حکومت قائم نہ ہو جائے اور یہ ایک غیر معمولی اقدام ہے جسے ان سے پہلے کسی صدر نے کیا ہے۔


جب تک کہ دوسری حکومت قائم نہ ہو جائے حکومت کے استعفے کو قبول کرنے کے فرمان پر دستخط کرنے کے اپنے ارادے کے غیر قانونی ہونے کے بارے میں صدر عون نے واضح کیا ہے کہ کوئی آئینی متن نہیں ہے جس میں اس کی ضرورت ہو بلکہ یہ مسئلہ اصولوں سے متعلق ہے اور رواج کی خلاف ورزی کی جا سکتی ہے۔


بار ایسوسی ایشن کے سابق سربراہ رشيد درباس نے جواب دیا ہے کہ حکومت نے اپنا استعفیٰ اس وقت تک پیش نہیں کیا جب تک کہ اسے قبول یا مسترد نہ کر دیا جائے، بلکہ استعفیٰ ناگزیر اور قانون کے مطابق ہوا ہے اور ساتھ ہی اس بات پر بھی زور دیا ہے کہ صدر جمہوریہ یہ صورتحال پیدا نہیں کرتے ہیں (حکومت کا استعفیٰ) بلکہ اس کا اعلان کرتے ہیں۔(۔۔۔)


ہفتہ 04 ربیع الثانی 1444ہجری -  29 اکتوبر   2022ء شمارہ نمبر[16041]    


Related News



انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا