جرمنی کے سرمایہ کاروں نے سٹرلنگ پاؤنڈ کے ذریعہ اپنی تجارت کے حجم کو کیا کم

جرمنی کے سرمایہ کاروں نے سٹرلنگ پاؤنڈ کے ذریعہ اپنی تجارت کے حجم کو کیا کم

پیر, 20 July, 2020 - 16:00
جرمن ایکسچینج مارکیٹوں میں سٹرلنگ پاؤنڈ کے ذریعہ کی جانے والی تجارت میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے اور "کورونا" کے زمانے میں وہ تقریبا غیر یورپی ہو گیا ہے اور جرمن سرمایہ کاروں نے ایکسچینج مارکیٹوں اور بینکوں میں سٹرلنگ پاؤنڈ سے دور رہنے کی وجہ کے سلسلہ میں کہا ہے کہ برطانوی قومی کرنسی مشکل دور سے گزر رہی ہے اور خاص طور پر یوروپی یونین سے اس کے نکلنے کے بعد معاملہ اور سنگین ہو گیا ہے اور یہ اقدام عارضی ہو سکتا ہے لیکن ابھی طویل مدتی ہے کیونکہ برطانوی معاشی کی بحالی کے اشارے ابھی تک نظر نہیں آرہے ہیں۔

فرینکفرٹ کے ڈوئچے بینک میں کرنسی ایکسچینج ڈیپارٹمنٹ سے تعلق رکھنے والے جرمن ماہر ریمو کلاؤس کا کہنا ہے کہ پونڈ میں اتار چڑھاؤ نے اسے کمزور اور دوسری ترقی پذیر کرنسی کی طرح بنا دیا ہے اور 23 جون  2016 کے بعد سے جب برطانیہ کا یوروپی یونین سے نکلنے کے بارے میں مشہور ریفرنڈم ہوا تھا اسی وقت سے برطانوی پاؤنڈ کی قیمت کم ہو گئی جس کی وجہ سے وہ تیزی سے ترقی یافتہ صنعتی ممالک کی کرنسیوں سے پیجھے رہ گیا اور میکسیکو پیسو جیسی ترقی پذیر مارکیٹوں کی کرنسیوں کی طرح ہوگئی ہے۔(۔۔۔)


پیر 29 ذی القعدہ 1441 ہجرى - 20 جولائی 2020ء شماره نمبر [15210]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا