دنیا کو بھوک کے خطرے سے دوچار کرنے کے الزامات لگے ہیں روس پر

دنیا کو بھوک کے خطرے سے دوچار کرنے کے الزامات لگے ہیں روس پر

اتوار, 19 June, 2022 - 09:15
گزشتہ روز مشرقی یوکرین کے علاقے لوگانسک میں لیسیچانسک کے قریب ایک گاؤں میں روسی بمباری سے تباہ ہونے والے اسکول کے ملبے کے سامنے ایک خاتون کو روتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے اور دائرہ میں زیلنسکی کو بھی جنوبی محاذ پر فوجیوں سے ملتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے (اے ایف پی)
گزشتہ روز یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بوریل نے روس پر الزام لگایا ہے کہ وہ یوکرین سے اناج کی برآمدات پر لگی پابندیوں کی وجہ سے دنیا کو فاقہ کشی کے خطرے میں ڈال رہا ہے۔

بوریل نے اپنے سرکاری بلاگ پر شائع ہونے والے ایک مضمون میں پرزور انداز میں کہا ہے کہ ہم اقوام متحدہ کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہیں تاکہ عالمی غذائی تحفظ پر ہماری پابندیوں کے کسی بھی ناپسندیدہ اثرات کو روکا جا سکے اور یوروپی وزارت خارجہ کے اہلکار نے یوکرین میں اس سیاسی اختیار کی مذمت کی ہے جو روس نے شعوری طور پر اناج کی برآمدات (فوجی بنانے) کے لیے کیا ہے اور اسے یوکرین میں اس کے حملے کی مخالفت کرنے والے ہر شخص کو بلیک میل کرنے کے لیے ایک آلہ کے طور پر استعمال کیا ہے۔


انہوں نے اشارہ کیا ہے کہ روس نے بحیرہ اسود کو جنگی علاقے میں تبدیل کر دیا ہے اور یوکرین سے آنے والے اناج اور کھاد کی ترسیل میں رکاوٹیں کھڑی کر دیا ہے اور وہ اپنی اناج کی برآمدات پر کوٹے اور ٹیکسوں کا نظام بھی نافذ کر رہا ہے اور انہوں نے یہ بھی وضاحت کی ہے کہ یورپی یونین کی طرف سے لگائی گئی پابندیاں روس کو زرعی مصنوعات اور بیج برآمد کرنے اور نہ ہی ان کی خریداری سے نہیں روک پا رہی ہیں کیونکہ اس میں شرط ہے کہ پابندیوں کے شکار افراد یا ادارے ان کارروائیوں میں ملوث نہ ہوں۔


 دوسرے سیاق وسباق میں سیوروڈونٹسک کے قریب لڑائیاں سخت ہو چکی ہیں جو لوگانسک کے علاقے میں یوکرائنی افواج کی ثابت قدمی کا آخری قلعہ ہے جسے روسی افواج کئی ہفتوں سے کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہی ہیں اور علاقائی گورنر سرگئی گائیڈائی نے ٹیلیگرام ایپ کے ذریعے کہا ہے کہ اب شدید ترین لڑائیاں سیوروڈونٹسک کے قریب ہو رہی ہیں اور انہوں نے مزید یہ بھی کہا کہ پڑوسی دیہاتوں میں لڑائیاں بہت سخت ہیں۔" توشکسوکا اور زولوٹی میں وہ آگے بڑھنے کی کوشش کررہے ہیں لیکن ناکام ہو رہے ہیں۔(۔۔۔)


اتوار  20  ذی القعدہ  1443 ہجری  - 19    جون   2022ء شمارہ نمبر[15909]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا