اٹلی میں وزارت عظمیٰ کی دہلیز پر "دائیں بازو کی علامت" جارجیا میلونی

اٹلی میں وزارت عظمیٰ کی دہلیز پر "دائیں بازو کی علامت" جارجیا میلونی

جمعہ, 23 September, 2022 - 08:00
میلونی کل روم میں دائیں بازو کی جماعتوں کی ریلی میں شرکت کے لیے اپنی آمد پر (اے ایف پی)

سویڈن میں حال ہی میں متشدد دائیں بازو کے اقتدار میں آنے اور مغربی ممالک میں حکومت مخالف نقطہ نظر کی حامل کئی بنیاد پرست جماعتوں کے قریب آنے کے ساتھ ساتھ اٹلی بھی اپنے پارلیمانی انتخابات میں حصہ لینے کی تیاری کر رہا ہے۔ جو ممکنہ طور پر انتہائی دائیں بازو کی آئیکن جارجیا میلونی کو سیاسی درجہ بندی کے اوپر لے جائے گی، جو ملکی تاریخ میں حکومت کی سربراہی کرنے والی پہلی خاتون ہوں گی۔
فاشسٹ تحریک کی راکھ پر بننے والی "برادرہڈ آف اٹلی" کی پارٹی کی رہنما میلونی ایک ایسے ماحول میں پلی بڑھی ہیں جس نے مردانہ شخصیت کی عظمت کو بڑھایا ہے۔ وہ ایک ایسے ماحول میں پروان چڑھیں جس کی قیادت رہنما کی شبیہہ کرتی ہے، اور انہوں نے اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز برلسکونیائی وراثت کے سائے میں کیا، حتی کہ آج وہ اطالوی دائیں بازو کی ایک علامت بن چکی ہیں۔
انتخابی مہم کے آغاز کے بعد شاید ہی کوئی دن ایسا گزرتا ہو جس میں میلونی نے کچھ خیالات اور رویوں کا اظہار نہ کیا ہو جو یورپی دارالحکومتوں میں خطرے کی گھنٹی بجاتے ہوں، اس خوف سے کہ ان کی وزارت عظمیٰ پر آمد پورے براعظم میں انتہائی دائیں بازو کو مضبوط کر دے گی۔ انتہائی دائیں بازو کا عروج اور جورجیا میلونی کا اٹلی میں اقتدار کے دروازوں سے الحاق فاشزم میں زندگی کی واپسی کی وجہ سے نہیں ہے جتنا کہ موجودہ سیاسی صورتحال کی مخالفت کرنے والے پروگراموں اور منصوبوں کی طرف اطالوی ووٹر کی کشش کی وجہ سے ہے جو اس کی بنیادی تبدیلی کا مطالبہ کرتے ہیں۔(...)


جمعہ - 27 صفر 1444 ہجری - 23 ستمبر 2022ء شمارہ نمبر [16005]

 


Related News



انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا