بوریل کے اقدام کے باوجود جوہری معاہدے کے امکانات میں کمی آئی ہے

بوریل کے اقدام کے باوجود جوہری معاہدے کے امکانات میں کمی آئی ہے

ہفتہ, 30 July, 2022 - 12:30
ایرانی وزارت خارجہ کی طرف سے کل ویانا میں بین الاقوامی تنظیموں کے لئے تہران کے نئے ایلچی عبد اللہیان اور محسن نذیری کی ملاقات کی ایک تصویر شائع کی گئی دیکھی جا سکتی ہے
جوہری معاہدے کے امکانات کم ہوتے جا رہے ہیں کیونکہ ایران مارچ سے اپنی تعطل کی گئی مذاکراتی حکمت عملی پر قائم ہے اور ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبد اللہیان نے کل کہا ہے کہ تہران مذاکراتی عمل جاری رکھے گا اور یہ بیان امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس کی طرف سے 2015 کے معاہدے کی طرف تہران کی واپسی کی خواہش پر سوال اٹھائے جانے کے بعد سامنے آیا ہے۔

ایرانی میڈیا نے عبد اللہیان کے حوالے سے کل کہا ہے کہ ایرانی سفارتی کور پابندیوں کو ہٹانے کے لئے بات چیت جاری رکھے گا، لیکن ہم ایک اچھے، مضبوط اور پائیدار معاہدے تک پہنچنا چاہتے ہیں اور عبد اللہیان نے ایران اور بڑی طاقتوں کے درمیان جوہری مذاکرات کی پیشرفت پر یورپی یونین کے خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بوریل کی طرف سے (منگل) پیش کئے جانے والے اقدام پر تہران کے موقف کو ظاہر نہیں کیا ہے۔


بوریل نے تہران اور واشنگٹن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اپنے مسودے کے تصفیے کو قبول کرکے سنگین بحران سے بچیں اور اس بات پر بھی زور دیا ہے کہ اضافی اہم رعایتیں دینے کی جگہ ختم ہو چکی ہے۔(۔۔۔)


ہفتہ  02   محرم الحرام  1444 ہجری   -  30 جولائی   2022ء شمارہ نمبر[15950]  


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا